عظیم پاکستانی کرکٹر نے فخر زمان کی ڈبل سنچری کو معمولی قرار دے دیا

کراچی: قومی کرکٹ ٹیم کے سابق لیگ سپنر عبدالقادر نے پاکستان کرکٹ بورڈ ((پی سی بی)) سے مطالبہ کیا ہے کہ گرین شرٹس کو جنوبی افریقہ ، نیوزی لینڈ ، انگلینڈ اور بھارت جیسی بڑی ٹیموں کے خلاف میدان میں اتارنے کیلئے حکمت عملی مرتب کی جائے۔ زمبابوے کے خلاف کھیلنے سے نوجوان کھلاڑیوں کو فائدہ نہیں ہوگا۔ انہوں نے انٹر نیشنل کرکٹ کونسل( آئی سی سی)) سے درخواست کی کہ وہ زمبابوے پر پابندی لگا کر افغانستان کو زیادہ سے زیادہ انٹرنیشنل کرکٹ کھیلنے کا موقع فراہم کرے۔

عبدالقادر کا کہنا تھا کہ زمبابوے کے خلاف حالیہ سیریز میں پاکستان نے جو بھی ریکارڈز بنائے وہ انہیں بالکل نہیں مانتے۔ عبدالقادر کے مطابق پاکستان اور زمبابوے کے درمیان ون ڈے سیریز میں غیر معیاری کرکٹ کھیلی گئی جسے دیکھنا تکلیف دہ تھا۔

ون ڈے میچوں میں صرف نئے ریکارڈ قائم ہوئے اور رینکنگ کو بہتر کیا گیااس لئے انٹر نیشنل کرکٹ کونسل کو چاہئے کہ وہ زمبابوے پر تین سال کے لئے کرکٹ کھیلنے کی پابندی عائد کرے اور زمبابوین کرکٹ بورڈ پر اپنے ڈومیسٹک انفراسٹرکچر کی بہتری کیلئے دباو ڈالے جب کہ افغان ٹیم جو تیزی سے انٹر نیشنل کرکٹ میں بہتر ہوتی جا رہی ہے اسے ایک روزہ کرکٹ کھیلنے کا زیادہ سے زیادہ موقع فراہم کیا جائے۔

عبدالقادر کا مزید کہنا تھا کہ ماضی میں ویسٹ انڈیز اور آسٹریلیا جیسی مضبوط ٹیمیں دنیائے کرکٹ میں عزت کمانے کیلئے سخت محنت کیا کرتی تھیں جب کہ زمبابوے کی موجودہ ٹیم کرکٹ کا حسن تباہ کر رہی ہے۔ زمبابوے کے اوسط درجے کے باﺅلرز اور بیٹسمینوں کو نئے ورلڈ ریکارڈز قائم کرنے کا موقع مل رہا ہے جس کا کوئی فائدہ نہیں کیوں کہ اس طرح نوجوان کھلاڑیوں کی کرکٹ بہتر نہیں بلکہ تباہ ہو رہی ہے۔

Comments

comments

Leave a Comment