وہاب ریاض، مکی آرتھر کے دل سے اتر گئے

لاہور: پیسر وہاب ریاض ہیڈ کوچ مکی آرتھر کے دل سے اتر گئے۔

یو اے ای میں سری لنکا کیخلاف گذشتہ سیریز کھیلنے والے وہاب کو آئر لینڈ اور انگلینڈ سے ٹیسٹ میچز کیلیے ممکنہ کرکٹرزکی25 رکنی فہرست میں بھی جگہ نہیں ملی، محدود اوورز کی کرکٹ سے وہ پہلے ہی باہر ہیں۔
ویب سائٹ ’’کرک انفو‘‘کو انٹرویو میں ہیڈ کوچ مکی آرتھر نے کہا کہ وہاب نے گذشتہ 2 سال میں میچز نہیں جتوائے، میری توقع ہوتی ہے کہ طویل عرصے سے انٹرنیشنل کرکٹ کھیلنے والے کھلاڑی میچ ونرز ثابت ہوتے ہوئے دوسروں کیلیے کارکردگی کا ایک معیار وضع کریں۔ دوسری صورت میں ہمارے لیے بہتر راستہ یہی ہے کہ مستقبل کو مدنظر رکھتے ہوئے نوجوان کھلاڑیوں پر سرمایہ کاری کریں، ہمارے پاس کئی باصلاحیت بولرز موجود ہیں۔
مکی آرتھر نے کہا کہ وہاب ریاض کو ڈراپ کرنا ایک بڑا فیصلہ ہے لیکن میچز کے میزبان ملک، کنڈیشنز و دیگر معاملات کو پیش نظر رکھتے ہوئے فیصلہ کرنا پڑا، قومی ٹیم میں جگہ بنانے والوں کیلیے کسی سہل پسندی کی گنجائش نہیں،میں وہاب ریاض کو قصور وار نہیں ٹھہراتا لیکن ان کی ٹریننگ اور گیند کیساتھ پرفارمنس کو نظر انداز نہیں کر سکتے۔

آرتھر نے کہا کہ میں پاکستان ٹیم کا ماحول اور کلچر تبدیل کرنا چاہتا ہوں، میری توقع نہیں ہوتی کہ کوئی پلیئر اپنی صلاحیت سے کمتر کھیل پیش کرے، خواہش ہے کہ کھلاڑی بلند حوصلے کے ساتھ بہترین کارکردگی دکھانے کیلیے بیتاب ہوں، کوئی فتوحات میں اپنا کردار ادا کرنے سے قاصر ہو تو اسے ٹیم میں اپنی جگہ خطرے میں ہی محسوس کرنا چاہیے۔

یاد رہے کہ وہاب اور فہیم اشرف پی ایس ایل کے بولرز میں سرفہرست تھے تاہم تجربہ کار پیسر کا اکانومی ریٹ (6.90) آل رائونڈر (7.75) سے بہتر تھا۔

وہاب2016 کے آغاز سے اب تک پاکستان کی طرف سے ٹیسٹ کرکٹ میں وکٹوں کے لحاظ سے تیسرے کامیاب ترین بولر ہیں، ان کی جگہ راحت علی کو شامل کیا گیا جو اس دوران ایڑی کی انجری کی وجہ سے قومی ٹیم سے دور رہے ہیں، ملتان سے تعلق رکھنے والے پیسر کی پی ایس ایل کے دوران فارم انھیں قومی ٹیم کے تربیتی کیمپ تک لانے کا ذریعہ بن گئی لیکن وہاب متاثر کن بولنگ کے باوجود کوچ کے پلان سے باہر ہوگئے۔

Comments

comments

Leave a Comment