”کوئی بھی شخص سیدھا سٹیڈیم نہ جائے کیونکہ۔۔۔“ کراچی میں فائنل کی ٹکٹیں خریدنے والوں کیلئے اہم اعلان ہو گیا، سٹیڈیم جانے کا کیا طریقہ کار ہے اور کس عمل سے گزرنا پڑے گا؟ انتہائی اہم معلومات جانئے

کراچی :  پاکستان سپر لیگ (پی ایس ایل) کے نیشنل سٹیڈیم میں ہونے والے فائنل میچ کیلئے سیکیورٹی انتظامات مکمل کر لئے گئے ہیں اور پولیس حکام کا کہنا ہے کہ فائنل میچ کے روز ناصرف مختلف سڑکیں ٹریفک کیلئے بند کر دی جائیں گی بلکہ سٹیڈیم کے اطراف ساڑھے آٹھ ہزار پولیس اہلکار تعینات ہوں گے اور میچ دیکھنے والوں کو شٹل سروس کے ذریعے سٹیڈیم پہنچایا جائے گا۔

بریگیڈئیر شاہد، ڈی آئی جی ایسٹ اور ڈی آئی جی ٹریفک نے پریس کانفرنس میں سیکیورٹی بریفنگ دیتے ہوئے بتایا کہ میچ والے دن یعنی 25 مارچ کو صبح 11 بجے مخصوص سڑکیں ٹریفک کیلئے بند کر دی جائیں گی اور دوپہر 12 بجے سے شام پانچ بجے تک سٹیڈیم میں داخلے کی اجازت ہو گی۔ عوام ایک بات ضرور یاد رکھیں کہ کوئی بھی شخص براہ راست سٹیڈیم جانے کی کوشش نہ کرے کیونکہ میچ دیکھنے والے تمام افراد کو مخصوص جگہ سے چلائی جانے والی شٹل سروس کے ذریعے ہی سٹیڈیم پہنچایا جائے گا اور اس حوالے سے عوام سے تعاون کے خواہاں ہیں۔
پریس بریفنگ میں بتایا گیا کہ میچ والے دن حسن سکوائر اور نیوٹاﺅن کے راستے بند ہوں گے اور حسن سکوائر سے سٹیڈیم تک روڈ ٹریفک کیلئے بند ہو گا تاہم تاہم شارع فیصل، راشد منہاس روڈ سٹیڈیم کے قریب ہسپتال کے دونوں روڈ کھلے رہیں گے جبکہ میچ کے دوران ڈالمیا روڈ کو بھی بند کر دیا جائے گا ۔
میچ دیکھنے کی غرض سے آنے والوں کیلئے یونیورسٹی روڈ پر تین پارکنگ سٹینڈ بنائے گئے ہیں اور دوسری پارکنگ ڈالمیا کے قریب ہے جبکہ کشمیر پوائنٹ پر بھی ایک پارکنگ ہے اور ان سب پوائنٹس سے شائقین کو شٹل بس کے ذریے سٹیڈیم لایا جائے گا۔ میچ دیکھنے والے افراد یہ یاد رکھیں کہ جن لوگوں کےاٹکٹس ہیں وہ کار پارکنگ ایریز میں رپورٹ کریں گے اور براہ راست سٹیڈیم نہیں جائیں گے۔

اس کی وجہ یہ ہے کہ تماشائیوں کی مختلف جگہوں پر تلاشی کے بعد کلیئرنس کی جائے گی۔ تماشائی کار پارکنگ سے نکل کر پیدل چلنے والے ایریا میں پہنچیں گے تو وہاں تلاشی ہو گی اور پی بی سی سٹاف ٹکٹوں کی تصدیق کرے گا جس کے بعد شٹل سروس تماشائیوں کو اپنے ڈراپ زون پر چھوڑے گی۔ یہ بات یاد یاد رکھیں کہ ٹکٹ اورشناختی کارڈ ہونے پر ہی شٹل بس پر جانے کی اجازت ہو گی ۔ شائقین کو وفاقی اردو یونیورسٹی کے گراو¿نڈ میں بھی پارکنگ دی جائے گی اور وہیں سے شٹل سروس بھی دی جائے گی۔

شٹل سروس کا ایک ڈراپ زون بحریہ یونیورسٹی کے سامنے اور ایک آغا خان کے سامنے بھی بنایا گیا ہے۔ ڈراپ زون میں چیکنگ کے بعد تمام لوگ پیدل سٹیڈیم کی طرف روانہ ہوں گے اور سٹیڈیم کے دونوں داخلی دروازوں پر پر ایک مرتبہ پھر جامع تلاشی لی جائے گی۔ میچ دیکھنے آنے والوں سے گزارش ہے کہ وہ سیکیورٹی اور ٹریفک اہلکاروں سے الجھنے سے گریز کریں اور سیکیورٹی اہلکاروں کیساتھ ہر ممکن تعاون کریں۔ میچ دیکھنے والوں کو واک تھرو گیٹ سے بھی گزارا جائے گا اور کسی شخص کو پیدل سٹیڈیم تک آنے کی اجازت نہیں ہو گی۔ 1600 ٹریفک پولیس اہلکار مختلف مقامات پر تعینات ہوں گے۔

Comments

comments

Leave a Comment